آرمی چیف کی نئی تقرری کی سمری متفقہ طور پر منظور

’چھ ماہ کو تین سال سمجھا جائے، آرمی چیف جمہوریت کی خاطر حکومت کیساتھ ہیں‘

فائل فوٹو


اسلام آباد: سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد وفاقی کابینہ میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی نئی تقرری کی سمری متفقہ طور پر منظور کرکے منظوری کے لیے صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی کو بھجوا دی۔

ذرائع نے ہم نیوز کو بتایا کہ کابینہ کے آج ہونے والے دوسرے اجلاس میں آرمی چیف کی دوبارہ تعیناتی کی سمری کا جائزہ لیا گیا۔

ان کے مطابق اجلاس کے دوران وزیراعظم کو قانونی نکات پر بریفنگ دی گئی۔

یہ کابینہ کا دوسرا اجلاس تھا۔ اس سے قبل ہونے والے اجلاس کے حوالے سے ذرائع نے بتایا تھا کہ وزیراعظم نے عدالت میں اٹھائے گئے نکات پر وزیر قانون فروغ نسیم سے سخت سوالات کیے۔

انہوں نے فروغ نسیم سے سوال کیا کہ انہوں نے آئینی نکات کے بارے میں بریف کیوں نہیں کیا؟

تاہم اس حوالے سے حکومتی ترجمان کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کی جانب سے وزیر قانون پر تنقید کی خبر سراسر جھوٹ پر مبنی ہے۔

آج صبح سپریم کورٹ نے پاک فوج کے سربراہ کی مدت ملازمت میں توسیع کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کر دیا تھا۔

دوران سماعت چیف جسٹس نے کہا کہ وزیر اعظم کو آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کا اختیار نہیں، صرف صدر پاکستان ہی اس میں توسیع کر سکتے ہیں۔

آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے خلاف درخواست جیورسٹ فاؤنڈیشن کی جانب سے دائر کی گئی تھی جس میں سیکریٹری دفاع اور دیگر کو فریق بنایا گیا تھا۔

رواں سال 19 اگست کو جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں تین سال کی توسیع کی گئی تھی۔


متعلقہ خبریں