قوم کی دولت خرچ کرنے کا پوچھنا زیادتی نہیں، چیئرمین نیب


لاہور: قومی احتساب بیورو ( نیب ) کے چیئرمین جسٹس ( ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ ملک سے بدعنوانی کا خاتمہ ہماری اولین ترجیح ہے، ’’ احتساب سب کے لیے ‘‘ کی پالیسی پر عمل جاری  ہے۔

نیب آفس لاہور میں متاثرین ماڈل ہاؤسنگ انکلیو کے 190 متاثرین میں 24 کروڑ 67 لاکھ  82  ہزار روپے کے چیک تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب میں جسٹس ( ر ) جاوید اقبال نے کہا کہ ہم نے ڈبل شاہ کو سنگل شاہ بنا دیا ہے۔ ڈبل شاہ کیس میں نو ارب کے فراڈ میں سے چار ارب روپے متاثرین کو واپس کر دیئے گئے ہیں جبکہ اس کیس کے دوسرے ملزم تصور گیلانی سے بھی ایک ارب دو کروڑ روپے کی رقم نکلوا  کر متاثرین  کو واپس کردی ہے ۔

نیب چیئرمین نے بتایا کہ ایلیٹ ٹاؤن ہاؤسنگ اسکیم لاہور کے متاثرین کی ڈوبی ہوئی رقم بھی لوٹا دی گئی ہے۔ لاہور ہاؤسنگ سیکٹر کے تقریباً  تین لاکھ  متاثرین میں 18 ارب روپے سے زائد کی رقم  واپس کر چکے ہیں جو ایک ریکارڈ کامیابی ہے۔

انہوں نے کہا کہ نیب کسی انتقامی کارروائی پر یقین نہیں رکھتا، قوم کی دولت خرچ کرنے کے بارے میں پوچھ لیا جائے تو کوئی جرم نہیں، جس طرح  کسی کے خلاف انکوائری کا  فیصلہ نیب کا پریس ریلیز جاری کر کے کیا جاتا ہے اسی طرح شکایت کی جانچ پڑتال، انکوائری اور انویسٹی گیشن بند کرنے کا فیصلہ بھی پریس ریلیز کے ذریعے کیا جاتا ہے۔

چیئرمین نیب  نے کہا کہ نیب  شفافیت، میرٹ، شواہد اور قانون کے مطابق کارروائی پر یقین رکھتا ہے، نجی ہاؤسنگ سوسائٹیز کے پرکشش اشتہارات کا ریگولیٹرز کو قبل از وقت نوٹس لینا چاہیے کہ حقیقت میں اُن کے پاس زمین ہے بھی یا نہیں۔


متعلقہ خبریں