دہشتگروں کی رہائی کے پیچھے کون لوگ تھے، تحقیقات ہونی چاہئے، بلاول بھٹو

بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ دہشت گردوں سے مذاکرات ورہائی کے فیصلے کے پیچھے کون لوگ تھے، تحقیقات ہونی چاہیے۔

اسلام آباد میں نگران وزیر داخلہ سرفراز بگٹی کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ دہشت گردی کیخلاف جنگ میں پاکستان نے بے شمار قربانیاں دیں، دہشت گردی کوختم کردیا گیا تھا لیکن پی ٹی آئی کے دورہ حکومت میں پارلیمان اورعوام کوپوچھے بغیردہشت گردوں کے ساتھ مذاکرات کیے گئے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ پی ٹی آئی کے بانی چیئرمین نے دہشت گردوں کوقبائلی علاقوں میں رہنیکی اجازت دی جس کے نیتجیمیں جگہ جگہ پھردہشت گردی ہورہی ہے۔

یہ کس قسم کا انصاف ہے، افسوس ایسا فیصلہ کیا گیا جس سیتمام جدوجہد انڈرمائند ہوگئیں، اس فیصلے کی وجہ سے پاکستان دہشت گردی کا شکارہے، عوام کوایک بارپھردہشت گردوں کا مقابلہ کرنا ہوگا۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ کسی سیاسی سوال کا جواب نہیں دوں گا، بگٹی صاحب کیلییکوئی مشکلات پیدا نہیں کرنا چاہتا، امید کرتیہیں الیکشن کیحوالیسیکوئی مسئلہ نہیں ہوگا۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ شہید بھٹوکیس کا فیصلہ سننے پر چیف جسٹس کے شکرگزار ہیں، مناسب ہوگا شہید بھٹو کے کیس کی کارروائی کولائیو دکھایا جائے، امید ہے اس کیس میں بھی انصاف ہوتا نظرآئیگا، ہم سیاسی لوگ ہیں جوبھی حالات ہواپنی سیاسی کمپین چلائیں گے۔

انکا مزید کہنا تھا کہ بھارتی عدالت عالمی قوانین کوری رائیڈ نہیں کرسکتی، کشمیرعالمی سطح پرتسلیم شدہ مسئلہ ہے جو یو این کی قراردادوں کے مطابق حل کرنا ہوگا، عالمی برادری کومسئلہ کشمیرکیحوالیسیاپنا کردارادا کرنا ہوگا۔


متعلقہ خبریں