پاکستان کی چین کو برآمدات میں 72.78 فیصد اضافہ

تجارتی خسارے

پاکستان کی چین کو برآمدات میں بڑا اضافہ ہو گیا، برآمدات میں 72.78 فیصد بڑھ گئیں۔

ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان(ٹی ڈی اے پی)کے تازہ ترین اعداد و شمار سے معلوم ہوا ہے کہ رواں مالی سال میں جولائی تا نومبر کے ابتدائی پانچ ماہ کے دوران گزشتہ مالی سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں پاکستان کی چین کو برآمدات میں 72.78 فیصد کا نمایاں اضافہ دیکھا گیا۔

گوادر پرو کے مطابق رواں مالی سال پاکستان کی برآمدات میں اضافے کی بنیادی وجہ پاک چین فری ٹریڈ ایگریمنٹ اور چینی مارکیٹ میں سازگار قیمتیں ہیں، رواں مالی سال کے جولائی تا نومبر کے دوران پاکستان نے چین کو 1307.89 ملین ڈالر (1.31 ارب ڈالر)کی برآمدات ریکارڈ کیں جو گزشتہ مالی سال کے اسی عرصے کے دوران رجسٹرڈ 756.98 ملین ڈالر کی برآمدات کے مقابلے میں 72.78 فیصد کا نمایاں اضافہ ظاہر کرتی ہیں۔

حکومت نے کاروبار میں بہتری کیلئےدرآمدات پر پابندی اٹھائی، نگران وزیر خزانہ

رواں مالی سال کے پہلے پانچ ماہ کے دوران پاکستان نے چین سمیت دنیا کے مختلف ممالک کو 1.4 ارب ڈالر مالیت کا چاول برآمد کیا ہے۔ پاکستان ٹریڈ پرسپیکٹو سہ ماہی تجارتی تجزیے (پہلی سہ ماہی) کے مطابق پاکستانی چاول کے لیے چین، فلپائن اور نائجیریا بنیادی خریدار ہیں۔

پاکستانی چاول مکمل طور پر مل اور ٹوٹا چاول کی طرح چینی مارکیٹ میں مقبول ہو رہا ہے۔ 2022 میں پاکستان نے چین کو 455 ملین ڈالر مالیت کا چاول برآمد کیا۔ اس سال پاکستانی برآمد کنندگان کی نظریں زیادہ سے زیادہ حصہ حاصل کرنے کے لیے چینی مارکیٹ پر ہیں۔

کاٹن یارن اور ریفائنڈ کاپر کی برآمدات میں نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا، جس میں کاٹن یارن کی برآمدات میں 49.77 فیصد اضافہ، 480.01 ملین ڈالر تک پہنچنا اور ریفائنڈ تانبے کی برآمدات میں 49.89 فیصد اضافہ شامل ہے، جو گزشتہ مالی سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں مجموعی طور پر 300.56 ملین ڈالر ہے۔ چین پاکستان فری ٹریڈ ایگریمنٹ اور چینی مارکیٹ میں اچھی قیمتوں کی وجہ سے ان اجناس کا ایک بڑا حصہ چین کو برآمد کیا گیا تھا۔

پاکستان بنیادی طور پر تل کے بیج برآمد کرتا ہے، جو اس کی کل تیل بیج کی برآمدات کا 99 فیصد ہے۔ دسمبر کے اوائل میں چینی کمپنی سی ایم ای سی کی جانب سے شروع کیے گئے ایک پروگرام کے ذریعے کاشت کیے جانے والے پہلے 50 ٹن تل کے بیج چین روانہ ہوگئے تھے۔ 2023 کے اوائل میں شروع ہونے والے اس جدید زرعی تعاون کا مقصد چین کو 10000 ٹن کے متوقع برآمدی حجم کے ساتھ 30،000 ایکڑ تک توسیع کرنا ہے۔

تین ماہ میں پیٹرول کی قیمت میں 64.04 روپے فی لیٹر کمی

تل کی کل برآمدات میں سے 80 فیصد سے زیادہ چین کو برآمد کیا گیا ۔ پاک چین فری ٹریڈ ایگریمنٹ اور چینی مارکیٹ میں اچھی قیمتوں کی وجہ سے مالی سال 2023 اور مالی سال 2024 کے دوران پاکستان کی تلوں کی برآمدات میں اضافے کا رجحان دیکھا گیا۔

رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی کے دوران پاکستان کی چین کو تل کے بیجوں کی برآمدات میں 148 ملین ڈالر کا اضافہ ہوا جو سہ ماہی بنیادوں پر 405.8 فیصد اضافہ ظاہر کرتا ہے۔ نومبر میں چین کو تل کے بیج کی برآمدات 64,711 ٹن کی غیر معمولی بلند ترین سطح پر پہنچ گئیں جن کی مالیت 113.66 ملین ڈالر رہی جو گزشتہ سال کے اسی مہینے میں 25.57 ملین ڈالر مالیت کے 16,728 ٹن کے مقابلے میں کافی زیادہ ہے۔

پاکستان، ایک بڑا عالمی گوشت پیدا کرنے والا ملک، بنیادی طور پر خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کے چھ ممالک کے ساتھ ویتنام، افغانستان، انڈونیشیا اور چین کو برآمد کرتا ہے۔ گزشتہ مالی سال کے دوران پاکستان سے گوشت اور بائی پروڈکٹ کی برآمدات 25 فیصد اضافے کے ساتھ 42 کروڑ 70 لاکھ ڈالر اور رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں 2 کروڑ ڈالر اضافے سے 11 کروڑ 30 لاکھ ڈالر تک پہنچ گئیں۔


متعلقہ خبریں