ہزاروں سال سے گمشدہ شہر دریافت


ایکواڈور: ماہرین آثار قدیمہ نے ایمازون جنگل کے گھنے اور سرسبز درختوں میں ہزاروں سال سے چھپا ہوا شہر دریافت کر لیا۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق جنوبی امریکی ملک ایکواڈور میں 2 دہائی قبل زمین میں دبی سڑکیں اور مٹی کے ٹیلے دریافت ہوئے تھے جو ماہرین آثار قدیمہ کے لیے ناقابل یقین دریافت تھی۔

حال ہی میں شائع ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق ماہرین نے اب لیزر سنسر ٹیکنالوجی کی مدد سے ایک نقشہ تیار کیا ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ وہاں کسی زمانے میں گنجان بستیاں اور سڑکیں موجود تھیں جو کوہ انڈیز کے دامن تک پھیلی ہوئی تھیں۔ اور اس خطے پر 500 قبل مسیح میں اُپانو قبیلے نے قبضہ کر لیا تھا اور وہ وہاں 300 سے 600 صدی عیسوی تک موجود رہے۔

تحقیق کے دوران اس خطے میں رہائشی اور مذہبی عمارات کو مٹی کے ٹیلوں سے باہر نکالا گیا، ان عمارات کے گرد کھیت اور نہروں کا نظام بھی موجود تھا جبکہ وہاں کی طویل ترین سڑکیں 33 فٹ چوڑی اور 6 سے 12 میل لمبی تھیں۔

ماہرین کے مطابق اس خطے کی آبادی کا تخمینہ لگانا مشکل ہے مگر ماہرین کے خیال میں وہاں کم از کم 10 ہزار افراد مقیم تھے۔

شہر کافی گنجان آباد تھا جس کا معاشرہ کافی پیچیدہ تھا، ایمازون میں رہنے والے افراد کے پاس عمارات تعمیر کرنے کے لیے پتھر نہیں تھے تو وہ مٹی سے عمارتیں تعمیر کرتے تھے۔

عرصے سے خیال کیا جا رہا تھا کہ ایمازون جنگل میں بہت کم افراد مقیم رہے ہیں مگر حالیہ تحقیقی رپورٹس سے ثابت ہوا ہے کہ اس خطے کا ماضی اندازوں سے زیادہ پیچیدہ ہے۔


متعلقہ خبریں