فیصلے سے مایوسی ہوئی،عمران خان اور بشری بی بی کا نکاح یکم جنوری کو ہوا تھا، بیرسٹر گوہر خان

بیرسٹر گوہر

پاکستان تحریک انصاف کے نامزد چیئرمین بیرسٹر گوہر نے سابق چیئرمین پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کے نکاح کو غیر شرعی قرار دیے جانے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ عدالت کے اس فیصلے سے مایوسی ہوئی ہے، عمران خان اور بشری بی بی کا یکم جنوری کو نکاح ہوا تھا۔

میڈیا سے گفتگو کے دوران بیرسٹر گوہر نے کہا کہ کیس کو سیاسی بنیادوں پر شروع کیا گیا، 24،24گھنٹے ٹرائل کرکے کیس کافیصلہ سنایا گیا ہے ۔ یہ سب کچھ سیاسی مقاصد کے لیے ہورہا ہے، توشہ خانہ کیس میں بشریٰ بی بی کا کہیں ذکر نہیں تھا ،پہلی بار کسی سیاسی جماعت کے انٹراپارٹی الیکشن کو دیکھا گیا ہے۔

قرآن مجید میں عدت کے معاملے میں واضح احکامات ہیں، بشری بی بی

انہوں نے کہا کہ ہم فیصلے کیخلاف ہائیکورٹ میں اپیل دائر کریں گے، امید ہے ہمیں انصاف ملے گا،انہوں نے اپیل کی ہے کہ عدلیہ انصاف کے تقاضے پورے کرتے ہوئے ہمارے کیسز دیکھے ، یہ سب غیر آئینی اور غیر قانونی ہو رہا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے بانی عمران خان اور بشری بی بی کا نکاح یکم جنوری کو ہوا تھا ، میرا ووٹر کیلئے پیغام ہے وہ برداشت اور تحمل کا مظاہرہ کریں۔

پی ٹی آئی نے راولپنڈی انتظامیہ سے تاریخ ساز جلسے کی اجازت مانگ لی

بیرسٹر گوہر کا کہناتھا کہ کیس میں ہمیں ثبوت دکھانے کا وقت نہیں دیا گیا، آج بھی جج نے زبانی فیصلہ سنایا ہے، ابھی بھی جج صاحب کے ججمنٹ پر دستخط نہیں ہیں۔


متعلقہ خبریں