کراچی میں وقفے وقفے سے جاری بارش نے محکمہ موسمیات کو بھی حیران کر دیا

کراچی

گزشتہ شب سے کراچی میں وقفے وقفے سے جاری بارش نے محکمہ موسمیات کو بھی حیران کر دیا۔

محکمہ موسمیات نے کہا کہ فروری میں کراچی میں ہونے والی یہ بارشیں غیر معمولی ہیں، ہمیں اتنی تیز بارش کی اْمید نہیں تھی، کوئی بھی موسمیاتی ماڈلز کراچی میں اتنی تیز بارش کی پیشگوئی نہیں کر رہے تھے۔

محکمہ موسمیات نے بتایا کہ جنوری 1995 میں کراچی میں 89.3 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی تھی جب کہ فروری 1979 میں 96 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی تھی۔

یہ ائیر پورٹ پر موسم سرما میں ہونے والی بارش کے بلند ترین ریکارڈ ہیں، ائیر پورٹ پر اب تک 60 ملی میٹر کے قریب بارش ہو چکی ہے، کراچی میں تیز بارش کا اسپیل نکل چکا ہے، اب وقفے وقفے سے شام تک ہلکی بارش متوقع ہے۔

محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ سرجانی ٹاؤن میں صبح سے اب تک 7.4 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی۔دوسری جانب بارش کے باعث ڈیفنس کے علاقے کی مختلف سڑکیں زیرِ آب آ گئیں۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز کراچی کی شارع فیصل، پی اے ایف فیصل بیس پر 75 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی۔ ملیر ہالٹ میں 64 ملی میٹر، سرجانی ٹاون میں 63.8 ملی میٹر اور کیماڑی میں 55 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی۔

محکمہ موسمیات کے مطابق گلشن حدید میں 50 ملی میٹر، سعدی ٹاون میں 52 ملی میٹر، ایئرپورٹ اولڈ ایریا میں 51 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی جبکہ پی اے ایف مسرور بیس میں 47.2، جناح ٹرمینل پر 42 ملی میٹر بارش ہوئی۔

محکمہ موسمیات کے مطابق ناظم آباد اور نارتھ کراچی میں 33.6 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی جبکہ یونیورسٹی روڈ 30 ملی میٹر، گلشن معمار 23.8 ملی میٹر اور کورنگی میں 15 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی۔

تیز بارش کے باعث کراچی کی بیشتر سڑکیں ڈوب گئیں۔ کورٹ روڈ، سندھ اسمبلی، اکبر روڈ اور اطراف کی سڑکیں پانی میں ڈوب گئیں جبکہ برنس روڈ فوڈ اسٹریٹ سے ملحقہ سڑک اور اطراف کے راستے دریا کا منظر پیش کرنے لگے۔

نارتھ کراچی میں شاہراہ عثمان پر سڑک کا ایک حصہ بارش کے باعث دھنس گیا اور سڑک پر پڑنے والے گڑھے میں گاڑی پھنس گئی۔ شہریوں نے گاڑی میں موجود خاندان کو اپنی مدد آپ کے تحت نکال لیا۔

بارش شروع ہوتے ہی شہر قائد کے بیشتر علاقوں کی بجلی بند ہو گئی جس کی وجہ سے شہریوں کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔


متعلقہ خبریں