طارق جمالی نیشنل بینک کے صدر تعینات


کراچی: نیشنل بینک آف پاکستان ( این بی پی ) کے سینئر ایگزیکٹیو نائب صدر طارق جمالی کو بینک کا صدر تعینات کر دیا گیا ہے، وزارت خزانہ نے طارق جمالی کی تقرری کی منظوری دے دی ہے۔

اس سے قبل نیشنل بینک کے صدر سعید احمد خان کو ان کے عہدے سے برطرف کر دیا گیا، ان پر الزام تھا کہ وہ سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے ساتھ منی لانڈرنگ میں ملوث تھے۔

وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق این بی پی کے سابق صدر علی رضا نے 1992 میں بینک کے درجنوں ایگزیکٹوز کو غیر ضروری طور پر ایک کروڑ مالیت تک کے کارکردگی ایوارڈز جاری کیے تھے،  طارق جمالی واحد ایگزیکٹو تھے جنہوں نے کیش ایوارڈ لینے سے انکار کر دیا تھا۔

کیش ایوارڈ  لینے سے انکار کے بعد طارق جمالی کو انتقاماً غیر اہم عہدوں پر تعینات کیا گیا اور ان کے طویل دورانیے کی ملازمت میں زیادہ تر انہیں غیراہم ذمہ داریاں ہی دی گئیں۔

طارق جمالی صدر بننے سے قبل بینک میں زرعی ایگزیکٹو ڈپارٹمنٹ کے سربراہ کی حیثیت سے کام کر رہے تھے۔

طارق جمالی 1987 سے نیشنل بینک کے ساتھ وابستہ ہیں اور اپنی 26 سالہ بینکاری خدمات کے دوران قومی بینک کے متعدد شعبوں میں فرائض انجام دے چکے ہیں۔ انہوں نے ڈیلاس (امریکہ) سے ماسٹر آف بزنس ایڈمنسٹریشن کی ڈگری حاصل کی ہے۔


متعلقہ خبریں